Tuesday, 22 December 2015

تو اُتر گیا ھے اب میرے دل و جان تلک


تو اُتر گیا ھے اب میرے دل و جان تلک
میری روح تلک، میرے گوشہ نہاں تلک

جا بجا بس تجھے ہی پایا ہے جلوہ نما
بادِ نسم کے نرم جھونکوں  سے کہکشاں تلک

زکر تیرا پایا کوہ قاف کے حسن خانوں میں
تیرے چرچے سُنے پریوں کے پرستاں تلک

تیری مہک پائی ،جہاں تک میری رسائی
چمن چمن ،کلی کلی، ہر گلستان تلک

تیرے وجود سے موجود ھے موسم بہار کا
رنگ بکھرے ہیں تیرے زمین و آسماں تلک

تُو رہے باقی ،جب تک ہے یہ جہان خاکی
 میرے گمان ، میرے حسنُ عشق کی داستان تلک

کب تک رہے گا تو یونہی چلمن کے پیچھے
 ساجن  چھپے گا رشکِ قمر کہاں تلک

(عبدالرؤف ساجن)




Post a Comment